صفحہ اول / مختلف / میری یاد میں تیرا ساتھ ہے۔۔۔۔

میری یاد میں تیرا ساتھ ہے۔۔۔۔

غزل
میری یاد میں تیرا ساتھ ہے۔۔۔۔
تیرے ساتھ سے یہ برسات ہے۔۔۔
جب ہجر کی وہ گرج چمک۔۔۔۔
مجھے چھونے آتی ہے بے سبب۔۔۔
تو جھٹک کہ اُن کی آغوش سے۔۔۔۔
تیری یاد لے جاتی مجھے۔۔۔۔۔
ہونہی بے سبب کبھی با سبب۔۔۔۔
تو نے یاد تو کیا تھا نہ؟
مجھے یاد کر کے رات میں۔۔۔۔
کوئی اشک بہایا تھا نہ؟
چلو چھوڑ دو ان یادوں کو۔۔۔۔
چلو بات کرتے ہیں ساتھ کی۔۔۔۔
کسی اور کہ پاس سے۔۔۔۔
کسی راز کی’کسی نیاز کی۔۔۔۔
کچھ آخری ملاقات کے۔۔۔
میرے دن جاتے ہیں بے سبب۔۔۔
اور رات بھی بے مطلب سی۔۔۔
تجھے سوچنا’تجھے ڈھونڈنا’کیا نہیں ہے دیر سے۔۔۔
تمہیں لگ رہا ہے یہ مذاق ہے۔۔۔
ارے مان لو یہی بات ہے۔۔۔
تجھے یاد ہم کرتے نہیں۔۔۔
کہ تکلیف ہوتی ہے اب مجھے۔۔۔۔
اور یاد بھی اب کیوں کروں۔۔۔
تو نے آس ہی کیا دی مجھے۔۔۔
کہنے کو تو یہ راز تھا’چلو کُھل گیا ہے آج یہ۔۔۔۔
تجھے یاد ہم نیکیا بہت۔۔۔۔
تیری یاد میں ہم روئے بہت۔۔۔۔۔
میری یاد میں تیرا ساتھ ہے۔۔۔۔
یہ جُدا نہیں ہوتی مجھ سے۔۔۔۔
کہ اب یہی میرا آسرا ہیں۔۔۔۔۔
کہ میرے پاس اب کچھ بھی نہیں۔۔۔۔
تُو بھی نہیں’یہ بھی نہیں۔۔۔۔۔
کہ میرے پاس خارا گلاب ہے۔۔۔۔
جو کِتاب میں رکھ چھوڑا ہے۔۔۔۔۔۔۔

یہ بھی پڑھیں

جرمنی میں پاکستانی سفارتخانے کے اندر فٹبال انکلیو قائم، وزیر خارجہ نے افتتاح کیا

جرمنی میں قائم پاکستانی ایمبیسی کے اندر ایک فٹبال انکلیو قائم کر دیا گیا ہے …